جنرل پوسٹ آفس چنیوٹ کی عمارت خستہ حالی کا شکار
 ستمبر 2016

سال 1970Ø¡ میں وفاقی حکومت Ú©ÛŒ جانب سے عوام Ú©ÛŒ سہولت Ú©Û’ لیے چنیوٹ شہر Ú©Û’ علاقہ محلہ لاہوری گیٹ میں تین کنال رقبہ پر جنرل پوسٹ آفس قائم کیا گیا تھا جو حکومتی عدم توجہ Ú©Û’ باعث بہت سے مسائل سے دوچار ہے۔پوسٹ آفس Ú©ÛŒ چھتوں اور دیواروں میں دراڑیں Ù¾Ú‘Ù†Û’ Ú©ÛŒ وجہ سے اس Ú©ÛŒ عمارت خستہ حالی کا شکار ہو Ú†Ú©ÛŒ ہے جو کسی بھی وقت حادثے کا سبب بن سکتی ہے۔پوسٹ آفس میں اس وقت پچیس افراد پر مشتمل عملہ کام کر رہا ہے جن Ú©ÛŒ رہائش Ú©Û’ لیے پوسٹ آفس Ú©Û’ ساتھ ہی چار کوارٹرز بنائے گئے ہیں لیکن یہ بھی خستہ حالی کا شکار ہیں اور عملہ Ù†Û’ وہاں پر رہائش رکھنا بھی ترک کر دی ہے۔پوسٹ آفس Ú©Û’ پارک Ú©Û’ لیے مختص Ú†Ú¾ مرلے جگہ صفائی Ú©ÛŒ ناقص صورتحال Ú©ÛŒ وجہ سے گندگی Ú©Û’ ڈھیر میں تبدیل ہو Ú†Ú©ÛŒ ہے۔حمید خان محلہ شادی ملنگ Ú©Û’ رہائشی ہیں اور ڈاک بھجوانے Ú©Û’ لیے پوسٹ آفس میں موجود ہیں۔سی فوٹی سیون نیوز سے بات کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ عمارت Ú©ÛŒ خستہ حالی Ú©Ùˆ دیکھ کر ڈر لگتا ہے کہ کہیں یہ عمارت ان Ú©Û’ اوپر نہ Ø¢ گرے۔محلہ معظم شاہ Ú©Û’ رہائشی غوث احمد کا کہنا ہے کہ ڈاک خانے میں لوگوں کا کافی رش رہتا ہے اس لیے کسی بھی حادثے Ú©ÛŒ صورت میں یہاں کافی نقصان ہونے کا اندیشہ ہے۔ان Ú©Û’ مطابق حکومت Ú©Ùˆ ڈاک خانے Ú©ÛŒ تعمیر اور تزئین Ùˆ آرائش کا کام فوری طور پر کرنا چاہیے تاکہ کسی بڑے حادثے سے بچا جا سکے۔محمد سلیم ریٹائرڈ فوجی ہیں اور پنشن Ú©Û’ حصول Ú©Û’ لیے یہاں موجود ہیں۔ان کا کہنا ہے کہ پوسٹ آفس میں بیٹھنے Ú©Û’ لیے کوئی انتظام نہیں جس Ú©ÛŒ وجہ سے پنشن Ú©Û’ حصول Ú©Û’ دوران کئی کئی گھنٹے کھڑا رہنا پڑتا ہے۔ان کا کہنا تھا کہ عمارت Ú©ÛŒ حالت زار دیکھتے ہوئے ہمیں تو یہاں آتے ہوئے بھی ڈر لگتا ہے کہ کہیں یہ ان Ú©Û’ اوپر نہ Ø¢ گرے۔جنرل پوسٹ آفس چنیوٹ میں کام کر رہے طاہر احمد کا کہنا ہے کہ وہ بائیس سال سے اس عمارت میں کام کر رہے ہیں لیکن اب یہاں کام کرنا کسی خطرے سے خالی نہیں ہے۔’بارشوں Ú©Û’ دنوں میں عمارت Ú©ÛŒ چھت ٹپکنے لگتی ہے جس Ú©ÛŒ وجہ سے اس Ú©Û’ گرنے کا خطرہ اور بڑھ جاتا ہے لہذہ حکومت اس معاملے پر خصوصی توجہ دے۔’ جنرل پوسٹ آفس چنیوٹ Ú©Û’ انچارج ہیڈ محمد ارشد گزشتہ ایک سال سے یہاں تعینات ہیں۔ان کا کہنا تھا کہ عمارت Ú©ÛŒ چھت کا لنٹر مکمل طور پر ناکارہ ہو چکا ہے اور اس میں جگہ جگہ دراڑیں Ù¾Ú‘ÛŒ ہوئی ہیں جبکہ رہائشی کوارٹر بھی رہنے Ú©Û’ قابل نہیں رہے ہیں۔’پوسٹ آفس میں یکم سے Ù„Û’ کر دس تاریخ تک پنشن وصول کرنے والے افراد کا زیادہ رش رہتا ہے لیکن ان Ú©Û’ بیٹھنے کا بھی کوئی خاص انتظام یہاں موجود نہیں ہے۔’وہ بتاتے ہیں کہ وہ کئی مرتبہ اپنے اعلیٰ افسران Ú©Ùˆ بلڈنگ Ú©ÛŒ عمارت Ú©Û’ متعلق تحریری طور پر آگاہ کر Ú†Ú©Û’ ہیں مگر اس پر کوئی پیش رفت نہیں ہو سکی۔محکمہ بلڈنگ Ù¹ÛŒ ایم اے چنیوٹ Ú©Û’ تحصیل آفیسر اینڈ پلاننگ خالد مسعود Ù†Û’ بتایا کہ شہر بھر میں ستر سے زیادہ عمارتیں انتہائی بوسیدہ ہو Ú†Ú©ÛŒ ہیں جن میں سے ایک یہ بھی ہے۔انہوں Ù†Û’ موٗقف اختیار کیا کہ ڈاک خانے Ú©ÛŒ چھت کسی بھی وقت گر سکتی ہے جس Ú©ÛŒ رپورٹ ایک سال قبل اعلیٰ حکام Ú©Ùˆ ارسال Ú©ÛŒ گئی تھی تاہم ابھی تک اس پر کوئی عمل درآمد نہیں ہوا ہے۔